Arbaab Raza Maula (AS)

Ya Raza, Ya Raza, Ya Raza, Maula Raza
Arbaab, Arbaab, Arbaab Raza Maula

Sultan e Arab, Shah e Khorasan
Arbaab Raza Maula

Nobat he teri Shaahi ka elaan
Maula Raza
Arbaab, Arbaab, Arbaab Raza Maula
Arbaab Raza Maula

1) Tabdiliyaan tu Lowh pe karta he qalam se
Waqif he zamana tere andaaz e karam se
Allah bhi rakh-ta he tera maan

2) Rozay ki ziyarat me ajab Hajj ka mazaa he
Zamzam he sabeel; aur Mina sehn-e-Shifa he
Roza he tera Kaaba e Imaan

3) Pohncha ta he mujh ko ye kisi aur fizaa me
Mein sehn me hote huway urh-ta hun hawa me
He farsh tera takht-e-Sulaymaan

4) Har ek pe kaunayn me ehsaan tere hein
Quraan ki qasam lulu aur marjaan tere hein
He shaan teri Sura e Rahmaan

5) Ho aaye Najaf phir bhi khasarey me rahe ga
Shabbir ke rauzay pe ussey kuch na mile ga
He jaan ke jo aap se anjaan

6) Tu jaag raha he toh me sota hun sukoon se
Banda tera waqif he tere Kun fa-yakoon se
He tere tasarruf me meri jaan

7) Raziq ke taraf se he tuhi rizq ka qaasim
He nazm-e-do-aalam ka tuhi aanthwaan naazim
Palte he tere rizq pe shiyaan

8) He arz yahi bargah-e-Shah-e-zamaan me
Momin na rahe koi pareshaan jahaan me
Bas aap ka dushman ho pareshaan

9) Aulaad ka taalib koi taalib he shifaa ka
Masooma e Qum ka unhein de-dijiye sadqa
Un sab pe bhi kar dijiye ehsaan

10) De’bal ko sanaa ke liye bulwaate the jayse
Hay arz ke mujh ko bhi bulaale kabhi ayse
He mir hasan mir ka armaan

● M A N Q A B A T L Y R I C S U R D U ●

ارباب رضا مولا ؑ
ارباب ،ارباب ، ارباب ،رضا مولا ؑ
سلطان ِعرب ،شاہِ خراسان ۔ارباب رضا مولا ؑ
نوبت ہے تیری شاہی کا اعلان

تبدیلیاں تو لوح پہ کرتا ہے قلم سے
واقف ہے زمانہ ترے اندازِ کرم سے
اللہ بھی رکھتا ہے تیرا مان

روضہ کی زیارت میں عجب حج کا مزہ ہے
زم زم ہے سبیل اور منا صحنِ شفاء ہے
روضہ ہے ترا کعبہ ٔ ایمان

پہنچاتا ہے یہ مجھ کو کسی اور فضاء میں
میں صحن میں ہوتے ہوئے اُڑتا ہوں ہوا میں
ہے فرش تیرا تخت سلیمان

ہر ایک پہ کونین میں احسان ترے ہیں
قرآں کی قسم لولو و مرجان تیرے ہیں
احسان تری سورۂ رحمٰن

ہو آئے نجف پھر بھی خصارے میں رہے گا
شبیرؑ کے روضے پہ اُسے کچھ نہ ملے گا
ہے جان کے جو آپ ؑسے انجان

مشہد بہ خدا قطعہ ای از عرش برین است
جاروبکش فرش حرمت روح الامین است
عقل بشر از فضل تو حیران

رازق کی طرف سے ہے توہی رزق کا قاسم
ہے نظمِ دو عالم کا تو ہی آٹھواں ناظم
پلتے ہیں ترے رزق پہ شیعیان

تو جاگ رہا ہے تو میں سوتا ہوں سکوں سے
بندہ تیرا واقف ہے تیرے کن فیکوں سے
ہے تیرے تصرف میں میری جان

ہے عرض یہی بارگاہِ شاہِ زماں ؑ میں
مومن نہ رہے کوئی پریشان جہاں میں
بس آپ ؑ کا دشمن ہو پریشان

اولاد کا طالب کوئی طالب ہے شفاء کا
معصومہ ٔ قمؑ کا انہیں دے دیجئے صدقہ
ان سب پہ بھی کر دیجئے احسان

دعبل کو ثناء کے لئے بلواتے تھے جیسے
ہے عرض کہ مجھ کو بھی بلا لیں کبھی ایسے
ہے میر حسن میر ؔ کا ارمان

 

 

 

#ArbaabRazaMola #ArbaabRazaMaula #ArbaabRazaMoula

155 Views
Arbaab Raza Maula (AS)

Scan this QR code to view these lyrics on your mobile devices.

More
Lyrics

More Nohay Lyrics Available On The APP

Screenshot