Ya AbalFazl (as)Title Kalam Mir Hasan Mir Nohay 2022
Abbas Abbas Abbas
Abalfazl Abalfazl Abalfazl Alamdar
Saqqiye Aale Abba Abalfazl
Tishna Labe Karbala Abalfazl
Chishma E Aabe Baqa Abalfazl
Ya Abalfazl Ya Abalfazl Ya Abalfazl Ya Abalfazl
Abalfazl Ya Abalfazl Ya Abalfazl
Karb Shabir Ke Chehre Se Mitane Wale
Ranj Se Aale Muhammad Ko Churane Wale
Tham Le Hath Pareshan Azadaron Ka
Aye Sakina Ke Liye Bazu Katane Wale
Abalfazl Ya Abalfazl Ya Abalfazl
Toot Jaye Na Meri Aaas Hai Umede Haram
Mere Zakhmo Ka Faqt Aap Ho Ghazi Marham
Arbaien Pe Hame Bulwale Ziyarat Ke Liye
Aap Ko Pehlu Shakista Kisi Bibi Ki Kasam
Abalfazl Ya Abalfazl Ya Abalfazl
Hum Ko Dunya Ka Tarafdar Na Hone De Na
Sirf Bato Ka Azadar Na Hone De Na
Sadqa Shehzadi Ruqaiya Ke Bhandhe Hathu Ka
Ham Ko Mushkil Main Giraftar Na Hone De Na
Abalfazl Ya Abalfazl Ya Abalfazl
Likhdo Taqdeer Main Phir Karbala Jana Ghazi
Apna Darbar Hame Jald Dikhana Ghazi
Wasta Deta Hu Zakhme Ali Akbar Ka Tume
Karbala Sare Javano Ko Bulana Ghazi
Abalfazl Ya Abalfazl Ya Abalfazl
Os Ghari Nazro Main Ashur Ki Ro Yaad Aai
Aansu Aakhu Main Bhare Honto Pe Faryad Aai
Samne Pani Tha Our Pi Bhi Nahi Saqta Tha
Mujko Roze Main Teri Peyas Bohat Yaad Aai
Abalfazl Ya Abalfazl Ya Abalfazl
Tum Ho Shabir Ki Beti Ka Sahara Ghazi
Bin Tumhare Na Huwa Os Ka Guzara Ghazi
Shimr Ne Jab Bhi Sakina Ko Tamache Mare
Os Ne Baba Ko Nahi Tum Ko Pukara Ghazi
Abalfazl Ya Abalfazl Ya Abalfazl
Os Ghari Khama E Sadat Main Kohram Huwa
Khoon Bhara Jis Ghari Rn Se Tera Parcham Aaya
Peyasi Mar Jaugi Aur Pani NAhi Magu Gi
Toor Kar Quze Ye Masoom Sakina Ne Kaha
Abalfazl Ya Abalfazl Ya Abalfazl
Tum Ne Aacha Huwa Bhai Ki Na Ghurbat Dakhi
Tane Deta Tha Koi Shah Pe Hasta Tha Koi
Apne Bhai Ki Madad Ke Liye Rn Main Aa Kar
Lash Zainab Ne Uthai Hai Ali Akbar Ki
Shah Ne Ro Kar Kaha Abalfazl
Uthu Mere Bawafa Abalfazl
Tanha Hai Bhai Tera Abalfazl
Abalfazl Abalfazl Abalfazl Alamdar
Aakhari Lamho Main Shabir Bohat Peyase Thy
Bari Hasrat Se Sowe Nahar Nazar Karte The
Shimr Has Has Ke Lagata Raha 13 Zarbain
Aur Har War Pe Shabir Sada De Te Thy
Abalfazl Ya Abalfazl Ya Abalfazl
Mir Sajjad Beya Kese Kare Wo Manzar
Sham Ki Foj Main Jab Aag Lagai Aa Kar
Chinne Aa Gaye JAb Sar Se Rida Zainab Ki
Os Ghari Kehti Rahi Saniye Zahra Ro Kar
Abalfazl Abalfazl Abalfazl Alamdar
Abbas

عباس عباس عباس
ابالفضل ابالفضل ابالفضل علمدار

ساققیے آلے ابّا ابالفضل
تشنہ لابے کربلا ابالفضل
چیشمائےآبے بقا ا ابالفضل
یا ابالفضل یا ابالفضل یا ابالفضل یا ابالفضل
ابالفضل یا ابالفضل یا ابالفضل

کرب شبیر كے چہرے سے مٹانے والے
رنج سے آلے محمد کو چھوڑ انے والے
تھام لے ہاتھ پریشان آزاداروں کا
ائے سكینہ كے لیے بازو کٹانے والے
ابالفضل یا ابالفضل یا ابالفضل

ٹوٹ جائے نا میری آس ہے امیدے حرام
میرے زخموں کا فقط آپ ہو غازی مرہم
اربائین پہ ہمیں بولوالیں زیارت كے لیے
آپ کو پہلو شکستہ کسی بی بی کی قسم
ابالفضل یا ابالفضل یا ابالفضل

ہم کو دنیا کا طرفدار نا ہونے دے نا
صرف باتوں کا آزا دار نا ہونے دے نا
صدقہ شہزادی روقیا كے بھاندے ہاتھو کا
ہم کو مشکل میں گرفتار نا ہونے دے نا
ابالفضل یا ابالفضل یا ابالفضل

لیخدو تقدیر میں پِھر کربلا جانا غازی
اپنا دربار ہمیں جلد دکھانا غازی
واسطہ دیتا ہو زخمی علی اکبر کا تمیں
کربلا سارے جاوانو کو بولانا غازی
ابالفضل یا ابالفضل یا ابالفضل

اُس گھڑی نظروں میں آشور کی رو یاد آئی
آنسو آکھو میں بھرے ہونٹوں پہ فریاد آئی
سامنے پانی تھا اور پی بھی نہیں سکتا تھا
مجھ کو روزےمیں تیری پیاس بہت یاد آئی
ابالفضل یا ابالفضل یا ابالفضل

تم ہو شبیر کی بیٹی کا سہارا غازی
بن تمہارے نا ہُوا اُس کا گزارا غازی
شمر نے جب بھی سكینہ کو تاماچے مرے
اُس نے بابا کو نہیں تم کو پُکارا غازی
ابالفضل یا ابالفضل یا ابالفضل

اُس گھڑی خیمائے سادات میں کہرام ہُوا
خون بھرا جس گھڑی رن سے تیرا پرچم آیا
پییاسی مر جائوگی اور پانی نہیں ماگو گی
توڑ کر قوزے یہ معصوم سكینہ نے کہا
ابالفضل یا ابالفضل یا ابالفضل

تم نے اچھا ہُوا بھائی کی نا غربت دیکھی
تانے دیتا تھا کوئی شاہ پہ ہنستا تھا کوئی
اپنے بھائی کی مدد كے لیے رن میں آ کر
لاش زینب نے اُٹھائی ہے علی اکبر کی

شاہ نے رو کر کہا ابالفضل
اُٹھو میرے باوفا ابالفضل
تنہا ہے بھائی تیرا ابالفضل
ابالفضل ابالفضل ابالفضل علمدار

آخری لمحوں میں شبیر بہت پیاسے تھے
بڑی حسرت سے سووے نیہر نظر کرتے تھے
شمر ہس ہس كے لگاتا رہا 13 زربیں
اور ہر وار پہ شبیر سدا دے تے تھے
ابالفضل یا ابالفضل یا ابالفضل

میر سجاد بیا کیسے کرے وہ منظر
شام کی فوج میں جب آگ لگائی آ کر
چھیننے آ گئے جب سَر سے رِدا زینب کی
اُس گھڑی کیہتی رہی ثانیِ زاہرا رو کر
ابالفضل ابالفضل ابالفضل علمدار

عباس

 

 

322 Views
Ya AbalFazl (as)Title Kalam Mir Hasan Mir Nohay 2022

Scan this QR code to view these lyrics on your mobile devices.

More
Lyrics

More Nohay Lyrics Available On The APP

Screenshot