Sultan e Karbala Ke Mehmaan | Syed Raza Abbas Zaidi | Nohay 2022
 Likha Hai Ya Hussainع Moharram Ke Chand Par
Zahraس Bhi Aa Gayi’n Hain Baqayya Ko Chod Kar
Toote Huwe Dilon Ka Sahara Hai Jiska Dar
Aajao Us Hussainع Ki Janib Karen Safar
Jo Kibriya Ki Shan Mohammed Ki Jaan Hai
Haan Apne Zaayeron Ka Jo Khud Mezbaan Hai
Dam Ba Dam Qadam Qadam Hai Dil Me Ishqe Karbala Hussaina, Hussaina
Zaayeron Ke Qafilon Se Aa Rahi Hai Yeh Sada
Hussaina, Hussaina
Chale Chalo Badhe Chalo
Hussain Ki Sada Suno
Husssinع Tumko Bula Rahe Hain
Hai Samne Karbala
Akbarع Ke Sath Ghaziع Khud Lene Ja Rahe Hain
Sultane Karbala Ke Mehman Aa Rahe Hain
1) Parcham Ke Saaye Me Hai Abbasع Ki Sawari
Mehma’n Nawaziyon Ki Tayyariyan Hain Jaari
Shabbirع Ka Haram Hai Halchal Hai Khadimo Me
Gu’nbad Pe Shaahe Dee’n Ke Parcham Laga Rahe Hain
Sultane Karbala Ke Mehman..
2) Jo Bekafan Hai Uska Darbar Saj Raha Hai
Woh Ho Raha Hai Jo Bhi Abbasع Ne Kaha Hai
Hain Surkh Raushni Me Kaale Libas Wale
Ro Roke Farshe Matam Khadim Bicha Rahe Hain
3) Ro Roke Keh Rahe Hain Afsos Hai Yeh Bibiس
Aye Kash Hum Jo Hote Ashur Wale Din Bhi
9 Lakh Zalimo Me Tanha Na Hote Maula
Labbaik Keh Rahe Hain Aur Rote Ja Rahe Hain
4) Noorani Chehre Wale Gaalon Pe Khaakh Mal Kar
Zawwar Aa Rahe Hain Paidal Najaf Se Chal Kar
Is Ishq Ke Safar Me Har Shakhs Mezba’n Hai
Kuch Log Raaste Se Patthar Hata Rahe Hain
5) Un Par Salam Ho Jo Be Sakiyon Pe Aaye
Paon Ke Bal Nahi The Phir Bhi Na Ladkhadaye
Milti Nahi Sabhi Ko Yeh Ishq Ki Bulandi
Bas Ya Hussain Keh Kar Woh Chalte Ja Rahe Hain
6) Thaame Huwe Tabarrukh Raahon Me Jo Khade Hain
Qasimع Ka Naam Lekar Taqseem Kar Rahe Hain
Dono Jahan Me Aisa Jazba Kahin Na Dekha
Jo Saal Bhar Kamaya Woh Sab Luta Rahe Hain
6) Yeh Woh Zamee’n Hai Jis Par Pyasi Rahi Sakinaس
Ghaziع Ko Yaad Karke Roti Rahi Sakinaس
Ab Usko Zamee’n Pe Koi Pyasa Nahi Hai Dekho
Pyason Ko Mashk Wale Pani Pila Rahe Hain
7) “Zeeshan” Aur Raza Jab Maula Ke Paas Jaana
Hurع Ki Qasam Hai Tumko Tabdeel Hoke Aana Aana
Aye Zaireene Maula Hai Asl Yeh Ziyarat
Unki Hai Mezbani Jo Hurع Bana Rahe Hain
Sultane Karbala Ke Mehman Aa Rahe Hain
Tum Apne Dil Me Ziyarat Ki Aarzu Rakhna
Phir Unka Kaam Hai jazbe Ki Aabru Rakhna

 

URDU LYRICS

لکھا ھے یاحُسینؑ محرم کے چاند پر
زہراؑ بھی آگئیں ہیں بقیعہ کو چھوڑ کر
ٹوٹے ہوئے دلوں کا سہارا ھے جسکا در
آجاؤ اُس حُسینؑ کی جانب کریں سفر
جو کبریا کی شان محمدؐ کی جان ھے
ہاں اپنے زائروں کا جو خود میزبان ھے
دم بدم قدم قدم ھےدل میں عشقِ کربلا حُسینا حُسینا
زائروں کے قافلوں سے آرہی ہے یہ صدا
حُسینا حُسینا
چلے چلو بڑھے چلو
حُسینؑ کی صدا سنو
حُسینؑ تمکو بلارہے ہیں
ھے سامنے کربلا
اکبرؑ کے ساتھ غازیؑ خود لینے جارہے ہیں
سلطانِ کربلا کے مہمان آرہے ہیں
پرچم کے سائےمیں ھے عباسؑ کی سواری
مہماں نوازیوں کی تیاریاں ہیں جاری
شبیرؑ کا حرم ھے ہلچل ھے خادموں میں
گنبد پہ شاہِ دیں کے پرچم لگارہے ہیں
سلطانِ کربلا کے مہمان آرہے ہیں
جو بےکفن ہے اُسکا دربار سج رہا ھے
وہ ہورہا ھے جو بھی عباسؑ نے کہا ھے
ہیں سُرخ روشنی میں کالے لباس والے
رو روکے فرشِ ماتم خادم بچھارہے ہیں
سلطانِ کربلا کے مہمان آرہے ہیں
نورانی چہرے والے گالوں پہ خاک مل کر
زوار آرہے ہیں پیدل نجف سے چل کر
اِس عشق کےسفرمیں ہرشخص میزباں ہے
کچھ لوگ راستے سے پتھر ہٹارہے ہیں
سلطانِ کربلا کے مہمان آرہے ہیں
رو روکے کہرہے ہیں افسوس ہے یہ بی بیؑ
اےکاش ھم جو ھوتے عاشور والے دن بھی
نولاکھ ظالموں میں تنہا نا ہوتے مولاؑ
لبیک کہرہے ہیں اور روتے جارہے ہیں
سلطانِ کربلا کے مہمان آرہے ہیں
اُن پر سلام ہو جو بےساکیوں پہ آئے
پاؤں کے بل نہیں تھے پھر بھی نہ لڑکھڑائے
ملتی نہیں سبھی کو یہ عشق کی بلندی
بس یاحُسینؑ کہکر وہ چلتے جارہے ہیں
سلطانِ کربلا کے مہمان آرہے ہیں
تھامے ہوئے تبرک راہوں میں جو کھڑے ہیں
قاسمؑ کا نام لیکر تقسیم کر رہے ہیں
دونوں جہاں میں ایسا جذبہ کہیں نہ دیکھا
جو سال بھر کمایا وہ سب لٹارہے ہیں
سلطانِ کربلا کے مہمان آرہے ہیں
یہ وہ زمیں ھے جس پر پیاسی رہیں سکینہؑ
غازیؑ کو یاد کرکے روتی رہیں سکینہؑ
اب اس زمیں پہ کوئی پیاسہ نہیں ہے دیکھو
پیاسوں کو مشک والے پانی پلارہے ہیں
سلطانِ کربلا کے مہمان آرہے ہیں
ذیشان اور رضا جب مولاؑ کے پاس جانا
حُرؑ کی قسم ھے تمکو تبدیل ھوکے آنا
اے زائرینِ مولاؑ ھے اصل یہ زیارت
اُنکی ھے میزبانی جو حُرؑ بنارہے ہیں
سلطانِ کربلا کے مہمان آرہے ہیں
تم اپنے دل میں زیارت کی آرزو رکھنا
پھر ان ع کا کام ہے جذبے کی آبرو رکھنا

320 Views
Sultan e Karbala Ke Mehmaan | Syed Raza Abbas Zaidi | Nohay 2022

Scan this QR code to view these lyrics on your mobile devices.

More
Lyrics

More Nohay Lyrics Available On The APP

Screenshot