Utho Baba Mein Zainab as Hoon

ریہہ گئیں تنہا بیٹیاں بابا ہائے کوفہ شہر میں

 

اُٹھو بابا میں زینب ع ہوں یہ بیُ بی کی صدا ہوگی
میرے مولا علی کو جس گھڑی آئ قضا ہوگی

 

نہیں کیوں بولتے بابا بلاتی ہے تمہیں زینب ع
کہ سارے درد غربت کے سناتی ہے تمہیں زینب ع
تمہا رے بعد سر پے اب یتیمی کی ردا ہوگی

 

ابھی تو ماں کے صدمے سے نہ بچوں کو سکوں آیا
کہ تیری موت نے پھر سے ہمارے دل کو تڑپا یا
یوں لگتا ہے کہ اب ہم پے ستم کی انتہا ہوگی

 

علی ع کی لاش پے کلثوم ع یہ رو رو کے فرمائے
کیا اُس بیٹی کا جینا ہے کہ جس کا باپ مر جائے
یہ سن کر بین دختر کا تڑپتی سیدہ ع ہوں گی

 

بروزِ عید کلمہ گو بہت خوشیاں منائیں گے
تمہارے غم میں ہم بابا مگر آنسو بہائیں گے
بتاو عید کیا بابا یتیموں کی بھلا ہوگی

 

ردا سر پے نہیں ہوگی شرابی ہمسفر ہوں گے
ِسناں کی نوک پے بابا تمہارے سب پسر ہوں گے
جہاں بھی جائے گی زینب ع وہاں پے کربلا ہوگی

 

کبھی آلِ محمد ع کے نہیں غم کو بھُلا سکتے
ہے جب تک درد سینوں میں نہیں عیدیں منا سکتے
بروزِ عید بھی محسن ؔ ہمارے گھر عزا ہوگی

 

394 Views
Utho Baba Mein Zainab as Hoon

Scan this QR code to view these lyrics on your mobile devices.

More
Lyrics

More Nohay Lyrics Available On The APP

Screenshot