Jungle Mai Bharay Ghar Ko | Joan Rizvi
Joan Rizvi (Version)
Jungle main bharay ghar ko luta aye hai Zainab(sa)
Aey shair e Madina
Abid(as)ko kissi tarhan bacha laye hai Zainab(sa) \
Aey Shair e Madina
 
Bundwakay k rasan hathoon main aur khutbay suna kay
ghar bar luta k
dewar baray kufr ki dha aye hai Zainab(sa)
Aey Shair e Madina
 
Jis shehr main shahzadioon ki tarhan rahe thi
nazoon sa pali thi
sir nungay ussi shehr main ho aye hai Zainab(sa)
Aey Shair e Madina
 
Jo hijr pidar main rahe her waqt perashaan
sui nahi ik aan
is bachi ko zindan main sula aye hai Zainab(sa)
Aey Shair e Madina
 
Dharas thi bauhat bhai ko jis bhai k dam say
dil phat ta hai ghum say
sahil pa akaila ussay chor aye hai Zainab
Aey Shair e Madina
 
Chey maa kay Asghar(as) ko bhi jhoolay k bajae
dukh dard chupaye
aaghosh main turbat kay sula aye hai Zainab(sa)
Aey Shair e Madina
 
thay Aun o Muhammad(as) jo mere ankhoon k taray
mamoon k dularay
qurban unhain bhai pay ker aye hai Zainab(sa)
Aey Shair e Madina
 
Tha Akbar nashad jo is ghar ka ujala
woh gaisoon wala
marqad main akala ussay chor aye hai Zainab(sA)
Aey Shair e Madina
 
kis waqt khuda janay qadam niklay thay ghar sa
chadar chini sir say
ab tak na masaib sa nikal aye hai Zainab(sa)
Aey Shair e Madina
 
Reh jayay ga Akhtar ufaq e ghum pa tera naam
kya khoon inaam
noha tera sunnay k lia aye hai Zainab(sa)
Aey Shair e Madina

 


Urdu


جنگل میں بھرے گھر کو لُٹا آئی ہے زینب
اے شہر مدینہ
عابد کو کسی طرح بچا لائی ہے زینب
اے شہر مدینہ

۱) بندھوا کے رسن ہاتھوں میں اور خطبے سنا کے
گھر بار لٹا کے
دیوار بڑے کفر کی ڈھا آئی ہے زینب
اے شہر مدینہ

جنگل میں بھرے گھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲) جس شہر میں شہزادیوں کی طرح رہی تھی
نازوں سے پلی تھی
سر ننگے اسی شہر میں ہو آئی زینب
اے شہر مدینہ

جنگل میں بھرے گھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۳) جو ہجرِ پِدر میں رہی ہر وقت پریشاں
سوئی نہیں اک آں
اس بچی کو زنداں میں سلا آئی ہے زینب
اے شہر مدینہ

جنگل میں بھرے گھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۴) ڈھارس تھی بہت بھائی کو جس بھائی کے دم سے
دل پھٹتا ہے غم سے
ساحل پہ اکیلا اُسے چھوڑ آئی ہے زینب
اے شہر مدینہ

جنگل میں بھرے گھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۵) چھ ماہ کے اصغر کو بھی جھولے کے بجائے
دُکھ درد چھپائے
آغوش میں تربت کے سلا آئی ہے زینب
اے شہر مدینہ

جنگل میں بھرے گھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۶) تھے عون و محمد جو میری آنکھوں کے تارے
ماموں کے دلارے
قُربان انھیں بھائی پر کر آئی ہے زینب
اے شہر مدینہ

جنگل میں بھرے گھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۷) تھا اکبرِ ناشاد جو اس گھر کا اجالا وہ
گیسوئوں والا
مرقد میں اکیلا اُسے چھوڑ آئی ہے زینب
اے شہر مدینہ

جنگل میں بھرے گھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۸) نادِم ہے بہت لا سکی قاسم کو نہ ہمراہ
وا حسرت و درداں
کُبریٰ کو مگر ساتھ لیے آئی ہے زینب
اے شہر مدینہ
جنگل میں بھرے گھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۹) پانی جو پئیں اہل وطن پیاس نہ بھولیں
منہ اشکوں سے دھولیں
کہنے کو یہ بھائی کا پیام آئی ہے زینب
اے شہر مدینہ

جنگل میں بھرے گھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۰) منظر وہ بھلا سکتی نہیں تادمِ آخر
ہے کہنے سے قاصر
جو شام کے دربار میں دیکھ آئی ہے زینب
اے شہر مدینہ

جنگل میں بھرے گھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۱) کس وقت خدا جانے قدم نکلے تھے گھر سے
چادر چھّنی سر سے
اب تک نہ مصائب سے نکل پائی ہے زینب
اے شہر مدینہ

جنگل میں بھرے گھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۲) شبیر پہ اب روئے گا تا حشر زمانہ
ہے غم کا فسانہ
مجلس کی بناء شام میں ڈال آئی ہے زینب
اے شہر مدینہ

جنگل میں بھرے گھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۳) رہ جائے گا اختر اُفقِ غم پہ تیرا نام
کیا خوب ہے انعام
نوحہ تیرا سننے کے لیے آئی ہے
زینب
اے شہر مدینہ

جنگل میں بھرے گھر کو لُٹا آئی ہے زینب
اے شہر مدینہ
عابد کو کسی طرح بچا لائی ہے زینب
اے شہر مدینہ

 

 

https://youtu.be/swt8F6RWm-Q
670 Views
Jungle Mai Bharay Ghar Ko | Joan Rizvi

Scan this QR code to view these lyrics on your mobile devices.

More
Lyrics

More Nohay Lyrics Available On The APP

Screenshot