Zahraa Pay Hai Giraya Jalta | Syed Adnan Rizvi

Zahraa pay hai giraya jalta howa dar kesay
Ujraa hai pal may dekho basta howa ghar kesay

1- Maqtal may pasliyoun kay masoom chal basa hai
Haider ko bataeiy gi Mohsin ki khabar kesay

2- Ghush kar gaya hai Maa kay qadmo say lipat kar woh
Ab Fatima uthaey Baitay ka woh saar kesay

3- Mafluj ho gaya hai ek haath tera Bibi
Zahraa qoonout tera howa hai qasar kesay

4- Zainab too ek qadam bhi ghar may nahi chali hai
Bazaroun say phir uss ka hona hai guzar kesay

5- Na dhoondo Baqiya may tum qaabar Fatima ki
Mola nay chupai hai Aaey gi nazar kesay

6- Pehlu e Shikasta say mansuub jab hai noha
Tahrir e Salamat may Aaey na asar kesay


URDU


‎زھراء پہ ھے گرایا جلتا ھوا در کیسے
‎اجڑا ھے پل میں دیکھو بستا ھوا گھر کیسے

‎مقتل میں پسلیوں کے معصوم چل بسا ھے
‎حیدرء کو بتاٸے گی محسنء کی خبر کیسے

‎غش کر گیا ھے ماں کے قدموں سے لپٹ کر وہ
‎اب فاطمہء اٹھاٸے بیٹے کا وہ سر کیسے

‎مفلوج ھوگیا ھے اک ھاتھ تیرا بی بیء

‎زھراء قنوت تیرا ھوا ھے قصر کیسے

‎زینبء تو اک قدم بھی گھر میں نہیں چلی ھے
‎بازاروں سے پھر اس کا ھونا ھے گذر کیسے

‎نہ ڈھونڈو بقیعہ میں تم قبرِ فاطمہء کی
‎مولاء نے چھپاٸی ھے آٸے گی نظر کیسے

‎پہلوٸے شکستہ سے منسوب جب ھے نوحہ
‎تحریرِ سلامت میں آٸے نہ اَثر کیسے

542 Views

Scan this QR code to view these lyrics on your mobile devices.

More
Lyrics

More Nohay Lyrics Available On The APP

Screenshot