Nohay 2023 | Sakina Reh Gai Zindaan Main | Syed Raza Abbas Zaidi | Muharram 1445 | Bibi Sakina Noha Lyrics

Nohay 2023 | Sakina Reh Gai Zindaan Main | Syed Raza Abbas Zaidi | Muharram 1445 | Bibi Sakina Noha
Nohay 2023 | Sakina Reh Gai Zindaan Main | Syed Raza Abbas Zaidi | Muharram 1445 | Bibi Sakina Noha

#syedrazaabbaszaidi #sakinarehgaizindaanmain #nohay2023 #muharram2023

Kalam Title | Sakina Reh Gai Zindaan Main
Recited By | Syed Raza Abbas Zaidi
Poetry By | Zeeshan Abidi
Composition | Syed Raza Abbas Zaidi
Chorus By | Rizwan Mirza & Team
Special Thanks | Naveed Zaidi (GFS Builders ) Navaid Raza , Muhammad Husnain , Zain Raza , Hunain Raza , Husnain Raza , Syed Taseer Raza , Sawant Ali , Zairek Ali
Translation | Akbar Hassan Jaffery
Video Editing | Tna Production Ali Arman
Label | RAZ Records
Digital Partner | MobiTising
Cover Design By | Yawar Abbas Damani
Audio Recorded | Hasaan Qurashi
Master/Mixing | Omar Qurashi ODS Studio
Album | 2023 / 1445 H
=======================
Nohay Links
➽ Janab e Hazrat e Abbas Ko Bulaya Karo

➽ Roza Nahi Hussain Nazar Ayen

➽ Qatal Alamdar Hogaya

=======================
Follow US On Our Social Media Channels:
“Official Website”
➽ https://ift.tt/tFmA0Lv
“Follow on Facebook”
➽ https://ift.tt/cvwr7uo
“Subscribe Youtube Channel”
➽ https://www.youtube.com/c/syedrazaabbaszaidi
“Follow on Instagram”
➽ https://ift.tt/b3fJpsD
“Follow on Twitter”
➽ https://twitter.com/razaabbaszaidi
“Follow on SoundCloud’’
➽ https://ift.tt/a72JbAl
=======================
NOHA LYRICS
=======================
جب اہلِ حرم نے شام کے زنداں سے رہائی پائی
سجادؑ تڑپ کے کہنے لگے جب یاد سکینہؑ آئی
تم کیسے رہوگی زنداں میں اے بابا کی شیدائی
اتنا تو بتادو صغراؑ کو کیا جاکے بتائے بھائی
سنا جب نام صغرا کا
صدا آئی سنو بھیا
لگا ہے خون جس پر وہ مرے گوہر دکھادینا

سکینہؑ رہ گئی زندان میں بھائی بتادینا

سنو بھیا شکایت ہے مجھے ان شام والوں سے
کبھی درے لگائےہیں کبھی کھینچا ہے بالوں سے
طمانچے اتنے کھائے ہیں لہو بہتا ہے گالوں سے
بہت اچھا ہوا بھیا
وطن میں رہ گئی صغراؑ
کبھی وہ شام نا آئے اُسے میری دعا دینا

ہمیں اہلِ ستم جب بھی سرِ بازار لاتے تھے
ہماری بےبسی کا وہ تماشہ یوں دکھاتے تھے
چچا کا سر گرانے کیلئے مجھکو گراتے تھے
چچا کے پاس جانے پر
زمیں سے سر اُٹھانے پر
بہت مارا لعینوں نے یہ صغرا کو بتادینا

کہیں دیکھی نہیں ایسی محبت باپ بیٹی میں
مجھے دربار میں مانگا گیا جسدم کنیزی میں
دلاسہ مجھکو دینے آگیا سر میری گودی میں
مجھے حاکم نے جب دیکھا
یہ کہکر شمر کو بھیجا
چھڑاکر باپ کا سر تازیانوں کی سزا دینا

مجھے دربار میں بابا سے ایسے بھی ملایا تھا
ستمگر سامنے خُرمے کاجب اک طشت لایا تھا
میں کتنا روئی تھی جب طشت سےکپڑاہٹایا تھا
وہاں خرمے نہیں سر تھا
بتادینا اُسے بھیا
وہ روئے تو مری غربت کا اُسکو واسطہ دینا

کوئی بیٹی نہ دیکھے رن میں دیکھا میں نے جو منظر
گئی لاشوں سے ٹکراتے ہوئے بابا کے لاشے پر
کٹی اُنگلی بدن میں تیر دیکھے کٹ چکا تھا سر
نشاں تیروں کے اے بھیا
نہ دیکھے فاطمہ صغراؑ
پدر کا خوں بھرا کرتا وطن جاکر چھپادینا

سکینہؑ جانتی ہے کیسے دیکھا زخم سینے پر
اُسے کیسے بتاؤگے نہیں آئے علی اکبرؑ
بہن مرجائیگی بھائی کے مرنے کی خبر سنکر
بہت حساس ہے صغرا
گلے سے تم لگالینا
ترا میں بھی تو بھائی ہوں یہ کہکر حوصلہ دینا

چلے عابدؑ تو ذیشان و رضا آواز یہ آئی
وطن جاتے ہوئے جب کربلا جانا مرے بھائی
مرے عمو سے کہدینا سکینہؑ مر گئی پیاسی
نہیں پانی کا غم ہائے
چچا تم کیوں نہیں آئے
اندھیری قید میں گھٹ گھٹکے موت آئی بتادینا
=======================
Copyright strictly prohibited
© Copyright Information:
• All Rights of Nauhas, artwork, logo, audio & video are reserved by RAZ Records .

View on YouTube

889 Views

Scan this QR code to view these lyrics on your mobile devices.

More
Lyrics

More Nohay Lyrics Available On The APP

Screenshot