Kis Tarha Dekha Manzar Abid e Beemaar Ne | Falak Rizvi

کس طرح دیکھا وہ منظر عابدِ بیمارؑ نے

کس طرح دیکھا وہ منظر عابدِؑ بیمار نے
سنگ باری کی جو زینبؑ پر بھرے بازار نے
۔۔۔۔۔۔۔

ہنس کے لہرائی سِناں سے بارہا بازار میں
بنتِ حیدرؑ کی ردا شمرِ لعیں بدکار نے
۔۔۔۔۔۔۔

شمر نے مارے سکینہؑ کو تماچے کس قدر
کر دیا ظاہر یہ خوں بہتے ہوئے رخسار نے
۔۔۔۔۔۔۔

خون روئے عمر بھر اِس غم میں سجادِ حزیںؑ
بے ردا زینبؑ کو دیکھا مجمعِٔ اغیار نے
۔۔۔۔۔۔۔

مقتلِ بازار کا جانے کِیا کیسے سفر
بے ردا سیدانیوںؑ کے قافلہ سالارؑ نے
۔۔۔۔۔۔۔

کربلا کے بعد ہر لمحہ لہو رو کر کِیا
خُوں کا ماتم چشمِ غم سے عابدِ بیمارؑ نے
۔۔۔۔۔۔۔

ہر گلی کوچے میں ہر بازار ہر دربار میں
چادریں مانگیں مسلمانوں سے غیرت دارؑ نے
۔۔۔۔۔۔۔

جانے نامحرم نگاہوں سے نکلنے والے تِیر
کیسے جھیلے صاحبانِ عصمتِ اطہارؑ نے
۔۔۔۔۔۔۔

غربتِ عابدؑ فلک زہرا سے سنتے ہی ارمؔ!
دیر تک ماتم کیا ہر ایک ماتم دار نے

شمائلہ ارمؔ

509 Views

Scan this QR code to view these lyrics on your mobile devices.

More
Lyrics

More Nohay Lyrics Available On The APP

Screenshot